نواسہ رسول حسن بن علی رضی اللہ عنہما - Kifayatullah Sanabili Official website

2020-02-04

نواسہ رسول حسن بن علی رضی اللہ عنہما


پچھلا
 حدیث حسن بن علی رضی اللہ عنہما
امام دارقطني رحمه الله (المتوفى385) نے کہا:
”نا أحمد بن محمد بن زياد القطان , نا إبراهيم بن محمد , نا إبراهيم بن محمد بن الهيثم صاحب الطعام , نا محمد بن حميد , نا سلمة بن الفضل , عن عمرو بن أبي قيس , عن إبراهيم بن عبد الأعلى , عن سويد بن غفلة , قال: كانت عائشة الخثعمية عند الحسن بن علي بن أبي طالب رضي الله عنه , فلما أصيب علي وبويع الحسن بالخلافة , قالت: لتهنك الخلافة يا أمير المؤمنين , فقال: يقتل علي وتظهرين الشماتة اذهبي فأنت طالق ثلاثا , قال: فتلفعت نساجها وقعدت حتى انقضت عدتها وبعث إليها بعشرة آلاف متعة وبقية بقي لها من صداقها , فقالت: متاع قليل من حبيب مفارق , فلما بلغه قولها بكى وقال: لولا أني سمعت جدي , أو حدثني أبي , أنه سمع جدي يقول: أيما رجل طلق امرأته ثلاثا مبهمة أو ثلاثا عند الإقراء لم تحل له حتى تنكح زوجا غيره لراجعتها“
”سوید بن غفلہ کہتے ہیں کہ عائشہ خثعمیہ حسن بن علی طالب رضی اللہ عنہما کے نکاح میں تھیں ، تو جب علی رضی اللہ عنہ شہید ہوئے اور حسن رضی اللہ عنہ کی بیعت ہوئی تو ان کی اس بیوی نے کہا: امیر المؤمنین آپ کو خلافت مبارک ہو، تو حسن رضی اللہ عنہ نے کہا: علی رضی اللہ عنہ کی شہادت پر توخوشی کا اظہار کرتی ہے ، یہاں سے نکل جا تجھے تین طلاق ہے، راوی کہتے ہیں کہ پھر ان کی بیوی نے کپڑوں سے خود کو ڈھانک لیا اور گھر میں بیٹھ گئی اورجب عدت ختم ہوگئی تو حسن رضی اللہ عنہ نے ان کے پاس دس ہزار زائد اور بقایا مہر بھجوایا، تو ان اس نے کہا: پچھڑے محبوب کے مقابلہ میں یہ مال ومتاع کچھ نہیں ہے ، حسن رضی اللہ عنہ تک جب اس کی یہ بات پہنچی تو وہ روپڑے اورکہا: اگرمیں نے اپنے نانا سے یہ نہ سناہوتا اور مجھ سے میرے والد نے یہ نہ بتایا ہوتا کہ انہوں نے میرے نانا سے سنا ہے کہ جو شخص بھی اپنی بیوی کو اکٹھی تین طلاق دے دے یا الگ الگ تین طہر میں تین طلاق دے ڈالے تو وہ اس کے لئے حلال نہیں ہوسکتی جب تک کہ دوسرے شوہر سے شادی نہ کرلے تو میں اس سے رجوع کرلیتا“ [سنن الدارقطني، ت الارنؤوط: 5/ 55 ، وأخرجه الطبراني في معجبه 3/ 91 طريق علي بن سعيد ،والبيهقي في سننه 7/ 419 من طريق محمد بن إبراهيم بن زياد الطيالسي، كلهم (إبراهيم بن محمد وعلي بن سعيد ومحمد بن إبراهيم) من طريق محمد بن حميدبه۔وأخرجه أيضا الدارقطني في سننه رقم 5/ 56 فقال : نا أحمد بن محمد بن سعيد , نا يحيى بن إسماعيل الجريري , نا حسين بن إسماعيل الجريري , نا يونس بن بكير , نا عمرو بن شمر , عن عمران بن مسلم , وإبراهيم بن عبد الأعلى , عن سويد بن غفلةبه]

یہ روایت جھوٹی اور من گھڑت ہے ۔
سند میں ”محمدبن حمیدرازی“ موجود ہے جو کذاب تھا۔

امام بخاري رحمه الله (المتوفى256)نے کہا:
”فِيهِ نَظَرٌ“ ، ”اس میں نظر ہے“ [التاريخ الكبير للبخاري: 1/ 69]

امام جوزجاني رحمه الله (المتوفى259)نے کہا:
”كان رديء المذهب، غير ثقة“ ، ”یہ برے مذہب ولا اور غیر ثقہ تھا“ [أحوال الرجال للجوزجانى: ص: 350]۔

أبو حاتم محمد بن إدريس الرازي، (المتوفى277)نے کہا:
”هذا كذاب“ ، ”یہ کذاب یعنی بہت بڑا جھوٹا ہے“ [الضعفاء لابي زرعه الرازي: 2/ 739]۔

امام ابن حبان رحمه الله (المتوفى354)نے کہا:
”كان ممن ينفرد عن الثقات بالأشياء المقلوبات“ ، ”یہ ثقات سے تنہا الٹ پلٹ چیزیں روایت کرتا ہے“ [المجروحين لابن حبان: 2/ 303]

حافظ ابن حجر رحمه الله (المتوفى852)نے کہا:
”حافظ ضعيف“ ، ”یہ حافظ اور ضعیف ہے“ [تقريب التهذيب لابن حجر: رقم 5834 ]۔

خان بادشاہ بن چاندی گل دیوبندی لکھتے ہیں:
کیونکہ یہ کذاب اوراکذب اورمنکرالحدیث ہے۔[القول المبین فی اثبات التراویح العشرین والرد علی الالبانی المسکین:ص٣٣٤].

نیز دیکھئے رسول اکرم کاطریقہ نماز از مفتی جمیل صفحہ ٣٠١ ۔

دارقطنی کی دوسر ی سند میں ”عمرو بن شمر“ ہے۔
یہ بھی کذاب اور جھوٹا راوی ہے ۔

امام ابن سعد رحمه الله (المتوفى230) نے کہا:
”كان ضعيفا جدا متروك الحديث“ ، ”یہ سخت ضعیف اور متروک الحدیث تھا“ [الطبقات الكبرى ط دار صادر 6/ 380]

امام جوزجاني رحمه الله (المتوفى259) نے کہا:
”كذاب“ ، ”یہ بہت بڑا جھوٹا ہے“ [أحوال الرجال للجوزجاني، ت البَستوي: ص: 73]

امام أبو حاتم الرازي رحمه الله (المتوفى277) نے کہا:
”منكر الحديث جدا ضعيف الحديث لا يشتغل به تركوه“ ، ”یہ سخت منکر الحدیث ہے اس کی حدیث نہیں لی جائے گی لوگوں نے اسے ترک کردیا ہے“ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم، ت المعلمي: 6/ 239]

امام نسائي رحمه الله (المتوفى303) نے کہا :
”متروك الحديث كوفي“ ، ”یہ متروک الحدیث کوفی ہے“ [الضعفاء والمتروكون للنسائي: ص: 80]

امام ابن حبان رحمه الله (المتوفى354) نے کہا:
”كان رافضيا يشتم أصحاب رسول الله صلى الله عليه وسلم وكان ممن يروي الموضوعات عن الثقات في فضائل أهل البيت وغيرها“
”یہ رافضی تھا ، اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ کو گالیاں دیتا تھا، یہ اہل بیت کے فضائل وغیرہ میں ثقات سے جھوٹی احادیث روایت کرتا تھا“ [المجروحين لابن حبان، تزايد: 2/ 75]

امام دارقطني رحمه الله (المتوفى385) نے کہا:
”كوفي، متروك“ ، ”یہ کوفی متروک الحدیث ہے“ [سؤالات البرقاني للدارقطني، ت الأزهري: ص: 113]

امام ذهبي رحمه الله (المتوفى748) نے کہا:
”رافضي متروك“ ، ”یہ رافضی اور متروک ہے“ [ديوان الضعفاء ص: 303]

حافظ ابن حجر رحمه الله (المتوفى852) نے کہا:
”متروك“ ، ”یہ متروک ہے“ [التمييز لابن حجر، ت دكتور الثاني: 2/ 560]

اس کے علاوہ اس سند میں ”يحيى بن إسماعيل الجريري“ اور ”حسين بن إسماعيل الجريري“ غیر معروف ہے ، نیز ”أحمد بن محمد بن سعيد“ پر بھی کافی کلام ہے۔

خلاصہ یہ کہ یہ روایت جھوٹی اور من گھڑت ہے۔

No comments:

Post a Comment